نامور شہریوں نے تمام وزرائے اعلیٰ کو خطوط لکھے ، جس میں کہا گیا تھا – اسلامو فوبیا کے نام پر گمراہ کن پروپیگنڈا پھیلایا جارہا

نامور شہریوں نے تمام وزرائے اعلیٰ کو خطوط لکھے ، جس میں کہا گیا تھا – اسلامو فوبیا کے نام پر گمراہ کن پروپیگنڈا پھیلایا جارہا

11 مئی کو لکھے گئے اس خط میں ، اس گروہ نے تشویش کا اظہار کیا ہے کہ نجی طور پر رکھے ہوئے کچھ عناصر مسلسل غلط ، جھوٹے اور گمراہ کن پروپیگنڈے کو پھیلارہے ہیں کہ ایک خاص برادری کو ہراساں کیا جارہا ہے۔

نئی دہلی: ملک کے 183 نامور شہریوں نے ملک کے تمام وزرائے اعلی اور مرکزی خطوں کے لیفٹیننٹ گورنر کو خط لکھا ہے۔ خط کے ذریعے ہم سے ملک سے اسلامو فوبیا کے گرد پھیلائی جانے والی گمراہ کن کہانیاں سے بچنے کے لئے کہا گیا۔

ہندوستان کے سٹیزن نامی گروپ میں شامل ان 183 افراد میں ریٹائرڈ جج ، ریٹائرڈ آرمی آفیسر ، ریٹائرڈ آئی اے ایس افسران نیز فنانس ، سماجی اصلاحات اور ماہرین تعلیم کے علاوہ مختلف شعبوں کے ممتاز افراد شامل ہیں۔

خط میں کہا گیا ہے کہ اس وبا سے نمٹنے کے دوران ، صحت کی خدمات اور کھانے کی فراہمی کے لئے مرکزی حکومت اور ریاستی حکومت ہے ، اور یہ یقینی بنانے کے لئے انتھک محنت کر رہی ہے کہ کم از کم زیادہ لوگ اس وبا سے متاثر ہوں۔ لوگوں کی زندگیاں بچانے کے لیے ، جبکہ کوویڈ 19 میں وبائی مرض میں مبتلا دوسرے ممالک ہم سے سبق سیکھ رہے ہیں اور اپنی مثال دے رہے ہیں ، کچھ لوگ ایسے بھی ہیں جو ایسے وقتوں میں بھی گمراہ کر رہے ہیں رچار ہیں۔

11 مئی کو لکھے گئے اس خط میں ، اس گروہ نے تشویش کا اظہار کیا ہے کہ نجی طور پر رکھے ہوئے کچھ عناصر مسلسل غلط ، جھوٹے اور گمراہ کن پروپیگنڈے کو پھیلارہے ہیں کہ ایک خاص برادری کو ہراساں کیا جارہا ہے۔ اس گروپ نے ریاستی حکومتوں کو مکمل حمایت حاصل کی ہے جو کوویڈ 19 اور حکومت سے پیدا ہونے والی صورتحال سے لڑنے کے لئے ڈاکٹروں ، پیرا میڈیکل اسٹاف ، صفائی ستھرائی کے کارکنوں اور میدان میں کام کرنے والے عملے کے خلاف سخت کارروائی کررہی ہیں۔ ملازمین پر حملے ہوتے ہیں۔ خط میں ان حکومتوں کی بھی تعریف کی گئی ہے جو صفر رواداری کی پالیسی کے تحت ایسے طبقات اور مجرموں کے خلاف کارروائی کر رہی ہیں۔

خط میں لکھا گیا ہے کہ سرخ پرچم برداروں کا ایک گروپ اپنے ذاتی مفادات کے لئے ملک کے معاشرتی تانے بانے اور ہندوستان کی ساکھ کو دا at پر لگا کر نیوز میڈیا کے ذریعے بھارت مخالف پروپیگنڈے کو فروغ دے رہا ہے۔ یہ لوگ ایسے ٹوئیٹر ہینڈل کا سہارا لے رہے ہیں جو پاکستان سے چل رہے ہیں یا پاکستانی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی کے ذریعہ دنیا کے دوسرے ممالک میں بیٹھے ہندوستان کے خلاف خفیہ آپریشن کے ذریعے پروپیگنڈا پھیلارہی ہے۔

ملک کے 183 روشن خیال شہریوں کے ایک گروپ نے ریاستی حکومتوں سے ایسے افراد کی شناخت کرنے اور ان کے خلاف سخت قانونی کارروائی کرنے کی اپیل کی ہے۔ خط میں مزید لکھا گیا ہے کہ یہ بھی دیکھا گیا ہے کہ کچھ مشکوک قسمیں وسوسے مہم کے ذریعے جھوٹی اور گمراہ کن افواہوں کو پھیلارہی ہیں۔ اس کے پیچھے ان کا مقصد تارکین وطن مزدوروں میں غیر یقینی صورتحال پھیلانا اور اس سے فائدہ اٹھانا ہے۔ ریاستی حکومتوں کو اپنی خفیہ ایجنسیوں کے ذریعہ ایسے مشتبہ افراد پر کڑی نگاہ رکھنی چاہئے۔ ملک کے روشن خیال شہریوں کے اس گروپ نے خط میں ریاستی حکومتوں سے اپیل کی ہے کہ تمام حکومتوں کو تنوع میں مساوات اور اتحاد کا خیال رکھنا چاہئے

mlgheadlines

mlgheadlines

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: